منگل, نومبر 27, 2007

پوچھو کیوں ؟ (Ask Why?)

پوچھو کیوں ؟

ڈال پہ بیٹھی اک چڑیا

گاتی ہے چوں چوں چوں

پوچھو، پوچھو، پوچھو کیوں؟

باغ میں ہے اک پھول کھلا

ہرسو سبزہ ہرابھرا

جھرنے کا پانی بہتا

بول رہا ہے کابک میں

ایک کبوتر غٹرغوں

پوچھو، پوچھو، پوچھو کیوں؟

مہکی مہکی ہوا چلی

اٹھلاتی ہے اک تتلی

نیل گگن میں پتنگ اڑی

پنکھ پسارے جنگل میں

مور کرے پیہوں پیہوں

پوچھو، پوچھو، پوچھو کیوں؟

بوند آسماں سے ٹپکی

سوندھی سوندھی مہک اٹھی

بادل میں ہے دھنک تنی

پچھواڑے گلیارے میں

کتّا بھونکا بھوں بھوں بھوں

پوچھو، پوچھو، پوچھو کیوں؟

مالک ڈنڈا برسایا

کتّا کوئی نیا آیا

چور کو کوئی دوڑایا

آج اچانک صبح صبح

بلّی بولی میائوں میائوں میائوں

پوچھو ، پوچھو ، پوچھو کیوں؟

مکّھن دودھ نظر آیا

پیار سے کوئی سہلایا

یا پھر بلّا غرّایا!

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں