Saturday, October 13, 2007

urdu poems for children

I have a lot poems written specially for children in urdu.
So, from now on I will be posting them reguly.


36 comments:

  1. how can I write in urdu version.babyrose

    ReplyDelete
  2. Thanks for visiting my blog
    I cant understand your problem.Will you please explain it ?

    ReplyDelete
  3. i want poems written in urdu for chldrens of grade five

    ReplyDelete
  4. on the same blog ....
    http://bazmeurdu.blogspot.com/

    you may find some poems for children in following sections.
    Animals (5)
    Poems on objects (11)
    Kids Literature (8)

    ReplyDelete
  5. i m trying ti find following nazam . if someone can help me then kindly post it here
    ek tha geeto gerey , us k do mor they
    and
    bohat saal guzrey hein is baat ko , sabhi sach batatey hien is baat ko ,keh ladka tha ik sheher gilaan mein , yeh filaan ha imulk iran mein ( this poetry is about sheikh abdul qadir jelani )
    Thanking you in anticipation .

    ReplyDelete
    Replies
    1. Hi, I remember most of the poem, long tym back we had this poem in our school books.
      Buhut saal guzrai hain iss baat ko
      Sabhi such batate hain iss baat ko
      Ke larka tha ik shehr gilan main
      Wo gilan hai mulk Iran main
      Wo larka buhut naik atwar tha
      Buhut mehnati aur hushyar tha
      Wo kheilon se rehta tha aksar parey
      Usei shauq tha ilm haasil karey
      Kisee aur mash-hur se shehr main
      Buhut dur Baghdad ke shehr main
      Laykin wo larka tha chota abhi
      Safar par na thanha gaya tha kabhi
      Na aasaan tha phir safar un dinon
      Luteyron ka rehta tha dar un dinon
      Na bachta tha unse koi qaafila
      Ke wo rokleyte thei har raasta
      Ye subkuch tha laykin wo larka ke tha
      Ka-i sau baras pehley gilan ka
      Abhi door poncha na tha kafila
      Luteroon k narghay mein who aa gaya

      .......
      meri maa ka mujh ko yehi hukm tha
      meri jaan har aan sach bolna
      chali jaye gar jaan sach bolna
      k sach se koi cheez barh k nahi
      k sach ko zamanay mein koi dar nahi

      Delete
    2. Luckily I remember it word by word..since My school days..

      Here it is......

      Buhut saal guzrai hain iss baat ko
      Sabhi such batate hain iss baat ko
      Ke larka tha ik shehr gilan main
      Wo gilan hai mulk Iran main
      Wo larka buhut naik atwar tha
      Buhut mehnati aur hushyar tha
      Wo kheilon se rehta tha aksar parey
      Usei shauq tha ilm haasil karey
      Kisee aur mash-hur se shehr main
      Buhut dur Baghdad ke shehr main
      Laykin wo larka tha chota abhi
      Safar par na thanha gaya tha kabhi
      Na aasaan tha phir safar un dinon
      Luteyron ka rehta tha dar un dinon
      Na bachta tha unse koi qaafila
      Ke wo rokleyte thei har raasta
      Ye subkuch tha laykin wo larka ke tha
      Ka-i sau baras pehley gilan ka
      Abhi door poncha na tha kafila
      Luteroon k narghay mein who aa gaya

      Abhi door poncha na tha kafila
      Luteroon k narghay mein who aa gaya
      Jo tha saman wo loota gaya
      har insaan hewaan loota gya
      wo larka bhi aya jo pakra howa
      Lutairon se aa ke wo khud hi keney laga
      Mere paas chalees deeina hain
      mere paas chalees dinaar hain
      Khabar sun ke chalees dinaar ki
      Tapaknay lagi raal sardar ki
      talashi woh larkay ki lene laga
      bohat ghurkiyan us ko dene laga
      gahri do ghari baad thak har ke
      jo dinnar thay uss ne hasil kiye
      ginne tau poore chalees thay
      woh larkay ki jurrat pe heraan howa
      bohat is sadaqat pe heraan howa
      kaha us ne jab youn qamar khol ke
      bataa kya milaa tuj ko sach bol ke
      tau larkey ne youn saadgi se kaha

      meri maa ka mujh ko yehi hukm tha
      meri jaan har aan sach bolna
      chali jaye gar jaan sach bolna
      k sach se koi cheez barh k nahi
      k sach ko zamanay mein koi dar nahi

      ye sun kar woh sardar chup hogayaa
      khayalon ki dunya main woh kho gya
      ke na talaa hai larkay ne maa ka kaha
      aur main hun Khuda ko bhoola howa
      kahabar hi nahin us ke ehkaam ki
      nahin fiqar koi apne anjaam ki
      wo roya howa howa bohat hi sharamsaar
      ussi din se bass chor di lootmaar

      Buhut saal guzrai hain iss baat ko
      Sabhi such batate hain iss baat ko

      Delete
    3. Ek tha gaitu girey
      Us ke do more thay
      Ek ka kala tha sir
      Ek ke neele thay par
      Gana gatay thay woh
      Dum hilatay thay woh
      Sham ko din dhalay
      Apne ghar ko chalay
      Aa gaye lehar mein
      Ek naye shehar mein
      ....
      I cant rember any more, need a clue

      Delete
    4. سنو اک مزے کی کہانی سنو
      کہانی ہماری زبانی سنو

      بہت سال گزرے ہیں اس بات کو
      سبھی سچ بتاتے ہیں اس بات کو

      کہ لڑکا تھا اک شہر گیلان میں
      کہ گیلان ہے، ملک ایران میں

      وہ لڑکا بہت نیک اطوار تھا
      بہت محنتی اور ہوشیار تھا

      وہ کھیلوں سے رہتا تھا اکثر پرے
      اسے شوق تھا علم حاصل کرے

      کسی اور مشہور سے شہر میں
      ہت دور بغداد کے شہر میں

      مگر عمر چھوٹی تھی اس کی ابھی
      سفر پر نہ تنہا گیا تھا کبھی

      نہ آسان تھا پھر سفر ان دنوں
      لٹیروں کا رہتا تھا ڈر ان دنوں

      نہ بچتا تھا ان سے کوئی کافلہ
      کہ وہ روک لیتے تو ہر راستہ

      یہ سب کچھ تھا لیکن وہ لڑکا کے تھا
      ارادہ مصمم یہ کئے ہوا

      کہ بغداد کو جائے گا وہ ضرور
      اگرچہ شہر ہے وہ کوسوں ہی دور

      بہت ہی کیا اس نے اصرار جب
      کیا اس کی ماں نے اقرار تب

      کہ اس بار جب قافلہ آئے گا
      یہ ہمراہ اسی کے چلا جائے گیا

      کیا اس کی ماں نے جو رخصت اسے
      بہت پیار سے کی نصیحتت اسے

      میری جان ہر آن سچ بولنا
      چلی جائے گو جان سچ بولنا

      کہ سچ سے کوئی بات بڑھ کر نہیں
      کہ سچ کو جہاں میں کوئی ڈر نہیں

      ابھی دور پہنچا نہ تھا قافلہ
      لٹیروں کے نرغے میں وہ آ گیا

      جو تھا ساتھ سامان لوٹا گیا
      ہر انسان، حیوان لوٹا گیا

      یہ لڑکا بھی آیا جو پکڑا ہوا
      لٹیروں سے خود ہی یہ کہنے لگا

      میرے پاس چالیس دینار ہیں
      میرے پاس چالیس دینار ہیں

      گھڑی دو گھڑی بعد تھک ہار کے
      لٹیرے گئے پاس سردار کے

      رکھا سامنے مال لوٹا ہوا
      کہا تھا جو لڑکے نے وہ بھی کہا

      خبر سن کے چالیس دینار کی
      ٹپکنے لگی رال سردار کی

      تلاشی وہ لڑکے کی لینے لگا
      بہت گھرکیاں اس کو دینے لگا

      جو دینار تھے اس نے حاصل کیے
      گنے تو وہ پورے چالیس تھے

      وہ لڑکے کی جرآت پہ حیراں ہوا
      بہت اس صداقت پہ حیراں ہوا

      کہا اس نے جب یوں کمر کھول کے
      بتا کیا ملا تجھ کو سچ بول کے

      تو لڑکے نے یوں سادگی سے کہا
      میری ماں کا مجھ کو یہی حکم تھا

      میری جان ہر آن سچ بولنا
      چلی جائے گو جان سچ بولنا

      کہ سچ سے کوئی بات بڑھ کر نہیں
      کہ سچ کو جہاں میں کوئی ڈر نہیں

      یہ سن کر وہ سردار چپ ہوگیا
      خیالوں کی دنیا میں وہ کھو گیا

      کہ نہ ٹالتا ہے یہ ماں کا کہا
      اور میں خدا کو ہوں بھولا ہوا

      خبر ہی نہیں اس کے احکام کی
      نہ کوئی فکر اپنے انجام کی

      وہ رویا بہت اور ہوا شرمسار
      اسی دن سے بس چھوڑ دی لوٹ مار

      بہت سال گزرے ہیں اس بات کو
      سبھی سچ بتاتے ہیں اس بات کو

      سنو اک مزے کی کہانی سنو
      کہانی ہماری زبانی سنو

      Delete
  6. where is the poem?????? i want nice poem

    ReplyDelete
    Replies
    1. سنو اک مزے کی کہانی سنو
      کہانی ہماری زبانی سنو

      بہت سال گزرے ہیں اس بات کو
      سبھی سچ بتاتے ہیں اس بات کو

      کہ لڑکا تھا اک شہر گیلان میں
      کہ گیلان ہے، ملک ایران میں

      وہ لڑکا بہت نیک اطوار تھا
      بہت محنتی اور ہوشیار تھا

      وہ کھیلوں سے رہتا تھا اکثر پرے
      اسے شوق تھا علم حاصل کرے

      کسی اور مشہور سے شہر میں
      ہت دور بغداد کے شہر میں

      مگر عمر چھوٹی تھی اس کی ابھی
      سفر پر نہ تنہا گیا تھا کبھی

      نہ آسان تھا پھر سفر ان دنوں
      لٹیروں کا رہتا تھا ڈر ان دنوں

      نہ بچتا تھا ان سے کوئی کافلہ
      کہ وہ روک لیتے تو ہر راستہ

      یہ سب کچھ تھا لیکن وہ لڑکا کے تھا
      ارادہ مصمم یہ کئے ہوا

      کہ بغداد کو جائے گا وہ ضرور
      اگرچہ شہر ہے وہ کوسوں ہی دور

      بہت ہی کیا اس نے اصرار جب
      کیا اس کی ماں نے اقرار تب

      کہ اس بار جب قافلہ آئے گا
      یہ ہمراہ اسی کے چلا جائے گیا

      کیا اس کی ماں نے جو رخصت اسے
      بہت پیار سے کی نصیحتت اسے

      میری جان ہر آن سچ بولنا
      چلی جائے گو جان سچ بولنا

      کہ سچ سے کوئی بات بڑھ کر نہیں
      کہ سچ کو جہاں میں کوئی ڈر نہیں

      ابھی دور پہنچا نہ تھا قافلہ
      لٹیروں کے نرغے میں وہ آ گیا

      جو تھا ساتھ سامان لوٹا گیا
      ہر انسان، حیوان لوٹا گیا

      یہ لڑکا بھی آیا جو پکڑا ہوا
      لٹیروں سے خود ہی یہ کہنے لگا

      میرے پاس چالیس دینار ہیں
      میرے پاس چالیس دینار ہیں

      گھڑی دو گھڑی بعد تھک ہار کے
      لٹیرے گئے پاس سردار کے

      رکھا سامنے مال لوٹا ہوا
      کہا تھا جو لڑکے نے وہ بھی کہا

      خبر سن کے چالیس دینار کی
      ٹپکنے لگی رال سردار کی

      تلاشی وہ لڑکے کی لینے لگا
      بہت گھرکیاں اس کو دینے لگا

      جو دینار تھے اس نے حاصل کیے
      گنے تو وہ پورے چالیس تھے

      وہ لڑکے کی جرآت پہ حیراں ہوا
      بہت اس صداقت پہ حیراں ہوا

      کہا اس نے جب یوں کمر کھول کے
      بتا کیا ملا تجھ کو سچ بول کے

      تو لڑکے نے یوں سادگی سے کہا
      میری ماں کا مجھ کو یہی حکم تھا

      میری جان ہر آن سچ بولنا
      چلی جائے گو جان سچ بولنا

      کہ سچ سے کوئی بات بڑھ کر نہیں
      کہ سچ کو جہاں میں کوئی ڈر نہیں

      یہ سن کر وہ سردار چپ ہوگیا
      خیالوں کی دنیا میں وہ کھو گیا

      کہ نہ ٹالتا ہے یہ ماں کا کہا
      اور میں خدا کو ہوں بھولا ہوا

      خبر ہی نہیں اس کے احکام کی
      نہ کوئی فکر اپنے انجام کی

      وہ رویا بہت اور ہوا شرمسار
      اسی دن سے بس چھوڑ دی لوٹ مار

      بہت سال گزرے ہیں اس بات کو
      سبھی سچ بتاتے ہیں اس بات کو

      سنو اک مزے کی کہانی سنو
      کہانی ہماری زبانی سنو

      Delete
  7. i want poem in urdu about "importance of good habit".could u plz help me?i want it today

    ReplyDelete
  8. where is the poemmmmmm??????

    ReplyDelete
  9. I read your poem and it was very nostalgic...i enjoyed it very much.

    ReplyDelete
  10. This comment has been removed by the author.

    ReplyDelete
  11. Awesome poem....helped a lot for elocution

    ReplyDelete
  12. Alhamdo Lillah. Today i found this complete poem which i used to remember in good old days of school age in early sixties. Alas ! such moral boosting poems have been removed from our text books. May Allah Kareem send us such rulers of morality who have a top agenda of boosting the morality of our young generation.

    Dear all ! Thank you so much for sharing this poem depicting the moral values of Hazrat Ghaus ul Azam Peeran e pee dastgeer Shiekh Abdul Qadir Jilani. I wish I could run a school of my own and try to display and get memorized such poems to little angles of our nation. With best Regards. Sher Afgan Malik Lahore

    ReplyDelete
  13. Awsome poem for grade 4 students thankyou so much do you have any other poems like that? Thankyou for your kindness
    Myra

    ReplyDelete
  14. Awesome, I have been trying to find this poem for ages. I read it in school and since then never seen again. I only remembered a few lines so its great to read the whole poem again.

    ReplyDelete
  15. I feel so good to find this poem again. I read this poem in my school book and was trying to remember it for long time but could only remember a few couplets. Thanks very much for sharing it but I still think that this is not complete and a few lines are missing. For example, I remember below lines:

    bohut hi kia us ni israr jab
    kia us ki ammi ne iqrar tub
    ke is baar jab qaafla ae ga
    ye hamrah us ke chala jaega

    ReplyDelete
    Replies
    1. AM
      Ek tha gaitu girey
      Us ke do more thay
      Ek ka kala tha sir
      Ek ke neele thay par
      Gana gatay thay woh
      Dum hilatay thay woh
      Sham ko din dhalay
      Apne ghar ko chalay
      Aa gaye lehar mein
      Ek naye shehar mein
      ....
      I cant rember any more, need a clue

      Delete
  16. Mujhko urdu nazam chahiya grade 8 ka liya plz blog me

    ReplyDelete
  17. Does anyone have a link to the Urdu version?

    ReplyDelete
  18. I need Urdu poem grade 3 for elocution kindly help me

    ReplyDelete
  19. Here is the complete version of poem as far as ny memory goes Alhamdulillah.
    By Amanullah Khan Lodhi

    Buhut saal guzrai hain iss baat ko
    Sabhi such batate hain iss baat ko

    Ke larka tha ik shehr gilan main
    Ye gilan hai mulk Iran main

    Wo larka buhut naik atwar tha
    Buhut mehnati aur hushiyar tha

    Wo kheilon se rehta tha aksar parey
    Usay shauq tha ilm haasil karey

    Kisee aur mashhuur se shehr main
    Buhut dur Baghdad ke shehr main

    Wo lardka tha lekin chota abhi
    Safar par na thanha gaya tha kabhi

    Na aasaan tha phir safar un dinon
    Luteyron ka rehta tha dar un dinon

    Na bachta tha unse koi qaafila
    Ke wo roklayte thay her raasta

    Ye subkuch tha laykin wo larka ke tha
    Ka-i sau baras pehley gilan ka

    Kiya bohat us lardkay nay israar jub
    Tou kiya us ki amee ne iqraar tub

    Kay baghdad ko jaega wo zaroor
    Agarchay sheher hay wo kosoun he door

    Jo ab qaafila is taraf aayega
    Woh hamraha us kay chala jaaega

    Kiya jub uski maan ne rukhsat usay
    Bohat piyaar se ki wasyiat usay

    Meri jaan her aan such bolna
    Chali jaae go jaan such bolna

    Kay such say koi cheez bard kay nahi
    Kay such ko zamaanay se koi dar nahi

    Abhi door poncha na tha qaafila
    Luteroon k narghay mein who phans gaya

    Jo tha saath saman wo loota gaya
    her insaan hewaan loota gya

    Yeh lardka bhi aya jo pakarda hua
    Lutairon se wo khud hee kehene laga

    Mere paas chalees deenaar hain
    mere paas chalees deenaar hain

    Ghardi do gardhi baad thak har kay
    Luteray gae pass Sardaar kay

    Jo rakha woh saamaan luuta hua
    Kaha tha jo lardkay nay woh bhi kaha

    Khabar sun ke chalees dinaar ki
    Tapaknay lagi raal sardar ki

    talashi woh larkay ki lene laga
    bohat ghurkiyan us ko dene laga

    jo dinnar thay uss ne hasil kiye
    ginne tau poore wo chalees he thay

    woh larkay ki jurrat pe heraan hua
    Bohat uski sadaqat pe heraan hua

    kaha us ne jab youn kamar khol ke
    bataa kya milaa tujh ko such bol ke

    tau larkey ne youn saadgi se kaha
    meri maa ka mujh ko yehi hukm tha

    ye sun kar woh sardar chup hogayaa
    khayalon ki dunya main woh kho gya

    ke na talaa hai larkay ne maa ka kaha
    Magar main hun Khuda ko he bhoola howa

    kahabar hi nahin us ke ehkaam ki
    nahin fiqar koi apne anjaam ki

    wo roya bohat aur hua sharamsaar
    ussi din se bass chor di lootmaar

    Buhut saal guzrai hain iss baat ko
    Sabhi such batate hain iss baat ko

    ReplyDelete
  20. سنو اک مزے کی کہانی سنو
    کہانی ہماری زبانی سنو

    بہت سال گزرے ہیں اس بات کو
    سبھی سچ بتاتے ہیں اس بات کو

    کہ لڑکا تھا اک شہر گیلان میں
    کہ گیلان ہے، ملک ایران میں

    وہ لڑکا بہت نیک اطوار تھا
    بہت محنتی اور ہوشیار تھا

    وہ کھیلوں سے رہتا تھا اکثر پرے
    اسے شوق تھا علم حاصل کرے

    کسی اور مشہور سے شہر میں
    ہت دور بغداد کے شہر میں

    مگر عمر چھوٹی تھی اس کی ابھی
    سفر پر نہ تنہا گیا تھا کبھی

    نہ آسان تھا پھر سفر ان دنوں
    لٹیروں کا رہتا تھا ڈر ان دنوں

    نہ بچتا تھا ان سے کوئی کافلہ
    کہ وہ روک لیتے تو ہر راستہ

    یہ سب کچھ تھا لیکن وہ لڑکا کے تھا
    ارادہ مصمم یہ کئے ہوا

    کہ بغداد کو جائے گا وہ ضرور
    اگرچہ شہر ہے وہ کوسوں ہی دور

    بہت ہی کیا اس نے اصرار جب
    کیا اس کی ماں نے اقرار تب

    کہ اس بار جب قافلہ آئے گا
    یہ ہمراہ اسی کے چلا جائے گیا

    کیا اس کی ماں نے جو رخصت اسے
    بہت پیار سے کی نصیحتت اسے

    میری جان ہر آن سچ بولنا
    چلی جائے گو جان سچ بولنا

    کہ سچ سے کوئی بات بڑھ کر نہیں
    کہ سچ کو جہاں میں کوئی ڈر نہیں

    ابھی دور پہنچا نہ تھا قافلہ
    لٹیروں کے نرغے میں وہ آ گیا

    جو تھا ساتھ سامان لوٹا گیا
    ہر انسان، حیوان لوٹا گیا

    یہ لڑکا بھی آیا جو پکڑا ہوا
    لٹیروں سے خود ہی یہ کہنے لگا

    میرے پاس چالیس دینار ہیں
    میرے پاس چالیس دینار ہیں

    گھڑی دو گھڑی بعد تھک ہار کے
    لٹیرے گئے پاس سردار کے

    رکھا سامنے مال لوٹا ہوا
    کہا تھا جو لڑکے نے وہ بھی کہا

    خبر سن کے چالیس دینار کی
    ٹپکنے لگی رال سردار کی

    تلاشی وہ لڑکے کی لینے لگا
    بہت گھرکیاں اس کو دینے لگا

    جو دینار تھے اس نے حاصل کیے
    گنے تو وہ پورے چالیس تھے

    وہ لڑکے کی جرآت پہ حیراں ہوا
    بہت اس صداقت پہ حیراں ہوا

    کہا اس نے جب یوں کمر کھول کے
    بتا کیا ملا تجھ کو سچ بول کے

    تو لڑکے نے یوں سادگی سے کہا
    میری ماں کا مجھ کو یہی حکم تھا

    میری جان ہر آن سچ بولنا
    چلی جائے گو جان سچ بولنا

    کہ سچ سے کوئی بات بڑھ کر نہیں
    کہ سچ کو جہاں میں کوئی ڈر نہیں

    یہ سن کر وہ سردار چپ ہوگیا
    خیالوں کی دنیا میں وہ کھو گیا

    کہ نہ ٹالتا ہے یہ ماں کا کہا
    اور میں خدا کو ہوں بھولا ہوا

    خبر ہی نہیں اس کے احکام کی
    نہ کوئی فکر اپنے انجام کی

    وہ رویا بہت اور ہوا شرمسار
    اسی دن سے بس چھوڑ دی لوٹ مار

    بہت سال گزرے ہیں اس بات کو
    سبھی سچ بتاتے ہیں اس بات کو

    سنو اک مزے کی کہانی سنو
    کہانی ہماری زبانی سنو

    ReplyDelete
  21. Mujhe meri amma sunati thien aaj mein apni beti ko sunati houn yahan se parh k thank you aapki wajah se mujhe meri amma yaad a jati hei

    ReplyDelete
  22. my mother used to sing this poem when i was small can still hear her melodious voice .now i realize what she inculcated

    ReplyDelete