سوموار, نومبر 03, 2008

ghazal



غزل


کیوں بگولوں کی جستجو کیجئے

دل کہاں تک لہو لہو کیجئے





مٹ سکے کچھ نہ کچھ نظر آ ئے

لاکھ اب آ ئینے پہ ہُو کیجئے  1





کھا گئی دھوپ ہم نوا سارے

اپنے سائے سے گفتگو کیجئے





دیکھئے وقت کس طرح گزرا

خود کو شیشے کے رو برو کیجئے





آ رزو ہی تو زندگی ہے یہاں

زندگی ہے تو آرزو کیجئے



1 حوالہ ؛
مٹ جا ٔیں ایک آن میں کثرت نما ٔیاں
 ہم آ ٔینے کے سامنے جب آ کے ہو کریں
میردرد