جمعہ, فروری 20, 2009

Ghazal ... Shor Sa Andar Sunai Deta Hai

Ghazal
Muhammad Asadullah

Chale To Rah Mein Chubhne Lage Hain Sannate
Ruke To Shor Sa Andar Sunai Deta Hai

Yeh Kis Ne Rakh Di Hai Daftar Main Ghar Ki Khamoshi
Jo Ghar Mein Aain To Daftar Sunai Deta Hai

Aalag Sa Shor Jo Apny Hi Ghar Mein Sunte Ho
Nikal Ke Dekho To Ghar Ghar Sunai Deta Hai

Vo Kiyon Mujhe Meri Tanhaiyon Mein Milta Hai
Vo Kaun Hai Mujhe Aksar Sunai Deta Hai

Vo Hiddaten Tere Lahje Ki Kya Hooin Aakhir
Tere Labon Se Disambar Sunai Deta Hai

Nagar Yeh Kan Lapete Hai Kaisa Soya Pada
Yeh Kaisa Shor Barabar Sunai Deta Hai

DO ASHAR. URDU

DO ASHAR

MUHAMMAD ASADULLAH

Jahan Na Dhoop Hai Teri Na Tera Saya Hai
Tere Jahan Se Bahut Door Ghar Basaya Hai




Faza MEri Sahi Parvaz Us ki Apni Hai
Kahoon Main Kaise Vo Apna Hai Ya Paraya Hai

جمعرات, فروری 19, 2009

A POEM IN URDU آئینہ خانے کی تنہائی


آئینہ خانے کی تنہائی 
(نظم)
محمّد اسد اللہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہماری سوچ
ان راہوں پہ چلتی ہے 
جہاں چاندی برستی ہے

قدم 
ان وادیوں سے
اب گریزاں ہیں 
جہاں کچھ بھی نہیں ملتا

فقط اک آئینہ خانے کی تنہائی 
ہماری ذات کا نوحہ سناتی ہے
جسے بازار میں 
برسوں ہو ئے
ہم بیچ آ ئے ہیں !


سوموار, فروری 16, 2009

childhood pachpan بچپن کی یادیں

بچپن کی یادیں 
محمّد اسد اللہ
childhood
pachpan
،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،
بچپن ہماری زندگی کا یقینا سنہرا دور ہے ۔اس کی حسین یادیں تا عمر ہمارے دل و دماغ کے نہاں خانوں میں جگمگا تی رہتی ہیں ۔ انگریزی کے مشہور شاعر جان ملٹن نے اسے جنّتِ گمشدہ یعنی کھوئی ہو ئی جنّت کہا ہے ۔جب بھی ہم اپنے بچپن کے بارے میں سوچتے ہیں تو جی چاہتا ہے کہ کاش ہم ایک بار پھر چھوٹے سے بچّے بن جا ئیں ۔بچپن میں ہم گھر بھر کے دلارے اور سب کی آنکھ کے تارے تھے ہر کو ئی ہمیں لاڈ پیار کیا کر تا تھا ۔بچپن کی سہانی یادیں اس قدر دلکش ہو ا کر تی ہیں کہ انھیں یاد کر کے شاعر بے اختیار پکار اٹھتا ہے ۔ 

یادِ ماضی عذاب ہے یارب چھین لے مجھ سے حافظہ میرا 

میں جب بھی اپنے بچپن کے بارے میں سوچتا ہوں تو اپنے والدین کی وہ بے لوث محبّت اور شفقت یا د آ تی ہے ۔ نانا نانی ،دا دا دادی کا دلار اور ان کا ہمارے لیے فکر مند رہنا ۔ہماری تعلیم و تربیت اور کھانے پینے کی دیکھ بھال کر نا ، بھائی بہنوں کا ستا نا ، اسکول کے کاموں میں ہماری مدد کر نا ، سب یاد آ تا ہے اور یا د آ تے ہیں،بچپن کے وہ سارے دوست جن کے ساتھ ہم گھنٹوں کھیلا کرتے تھے۔ بچپن کے کھیل اس قدر دلچسپ ہوا کر تے تھے کہ دوستوں کے ساتھ یا میدان میں کھیلتے ہو ئے ان میں مگن ہو کر کھا نا پینا اور اپنے گھر جانا بھی بھول جاتے تھے ۔ بچپن ہر قسم کی فکر ،دشمنی کینہ ،کپٹ اور برائیوں سے پاک ہوا کر تا ہے اسی لیے تو بچوں کو فرشتہ کہاجاتا ہے ۔
میں ہمارا گھر جس جگہ واقع تھا ۔ اس کے قریب ایک ندی اور وسیع میدان تھاجس کے پیچھے گھنا جنگل تھا۔ میدان میں ہم طرح طرح کے کھیل کھیلا کرتے اور کبھی اپنے دوستوں کے ساتھ جنگل میں نکل جاتے،جہاں بیریوں کی جھاڑیاں اور املی کے بڑے بڑے پیڑ تھے ۔ جنگل سے املی اور بیر چنتے اور دوسرے پھل پھول جمع کر لاتے ۔ اکثر وہاں ہمیں اتنی دیر ہو جاتی کہ واپسی پر گھر میں امّی کی ڈانٹ سننی پڑ تی۔امّی کی ڈانٹ تو اور بھی کئی باتو ں پر کھاتے رہے مگر اصل ڈر لگتا تھا ابّو کی ڈانٹ سے اسکول نہ جانے اور نماز نہ پڑھنے پر تو یاد ہے کبھی مار بھی پڑی تھی۔ 
مجھے یاد ہے کہ ایک دن جب ہم بیر کی تلاش میں جھاڑیوں میں گھوم رہے تھے ۔ میرے ساتھ میرے دوست امجد ،اسلم اور ماجد بھی تھے ۔ امجد اچانک’’ سانپ سانپ ‘‘کہہ کر چینخ پڑا ۔یہ سنتے ہی ہمارے پیروں تلے کی زمین نکل گئی اور جب ہم سب نے قریب ہی زمین پر ایک بڑا کالاسانپ رینگتا ہوا دیکھا تو بد حواس ہو کر سب وہاں سے بھاگ کھڑے ہو ئے ۔گھر پہنچنے تک پیچھے مڑ کر بھی نہ دیکھا ۔ اس کے بعد کئی دنوں تک جنگل جانے کی کسی کی ہمّت نہیں ہو ٔی ۔
 
اسی طرح ایک مر تبہ عید کی خریداری کے لیے امّی اور ابّو کے ساتھ بازار گئے تھے ۔شاپنگ کر تے کرتے امّی اور ابّو آ گے نکل گئے اور میں ایک دکان پر کھلو نے دیکھنے میں کھویا رہا ۔جب ہو ش آ یا تو گھبر کر ادھر ادھر ڈھونڈتا رہا ۔بہت دیر تک رو تا ہوا بھٹکتا رہا ۔آ خر قریب کی ایک مسجد سے جب اعلان ہو ا تو کچھ لوگ مجھے وہاں پہنچا آ ئے جہاں امی اور ابّو میرا بیچینی سے انتظار کر رہے تھے ۔ 
بچپن کی یادوں میں دوستوں کے ساتھ ہو نے والی لڑائیاں بھی ہم کبھی نہ بھول پا ئیںگے ۔ اسکول میں نئے نئے دوست بن گئے تھے۔ان کے ساتھ خوب شرارتیں کرتے ۔ ذرا سی بات پر کٹّی کر بیٹھتے، لیکن زیادہ دنوں تک اس حالت میں دوست سے دور رہنا مشکل ہو جاتا اور کسی نہ کسی بہانے سے دوستی کر بیٹھتے ۔ بچپن ان تمام برائیوں سے دور تھا جو انسان سے خوشیاں چھین لیتی ہیں ۔ہمارے دلوں میں کسی کے لیے برائی نہ تھی ۔بچپن ایسی ہی معصوم یا دوں سے عبارت ہے ۔ اسی لئے ہر شخص کے دل میں کبھی نہ کبھی یہ خیال ضرور آ تا ہے کہ کاش اس کے بچپن کے وہ سہانے دل کسی طرح لو ٹ آ ئیں ۔لیکن یہ کسی بھی طرح ممکن نہ
یں ۔ 

اب بھی بچپن کے دوست یاد آ تے ہیں ۔ان کے ساتھ گزارے ہو ئے لمحات یاد آ تے ہیں تو ان کے چھن جانے کا افسوس ہو تا ہے ایسا محسوس ہو تا ہے جیسے ہم سے ہمارا بچپن نہیں کوئی قیمتی سرمایہ چھن گیا ہو۔کاش پھر سے لوٹ آ ئیں بچپن کے وہ سہانے دن !

اتوار, فروری 15, 2009

Sitaron Se Aage Jahan Aur Bhi Hain


Khyal  Pare
خیال  پارے 
Point Of view

Sitaron Se Aage Jahan Aur Bhi Hain
ستاروں سے آ گے جہاں اور بھی ہیں 
,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,

Kisi Sainsdan Ne Aaj Tak
Aasman Ki Chat Daryaft Naheen Ki Hai .
Charon Or Dishaiyen Khuli Hui Hain ,
Raste Bane hain 
Ya Naiee Raheen Banayi Ja Sakti Hain 
Insan Zameen ko Apny Qabze men Kar Ke hi Bada naheen Banta
Zmeen ko taj kar ,Chod kar Bhi bulandiyan Hasil ki Ja Sakti Hain
……………,

Phir Kyon Log Zra Zra Si Bat Par Brson Ladte Jhagadte Hain ‘
Ek Doosre Ke Khoon Ke Pyase Hain,
Hum Ne Yahan taraqqqi karne ,Aage badhne ke Imkanat aur Chances
Par Ghaur Naheen Kiya .

Kisi se Takra Kar mar Jane Se Behtar Hai 
Use Side de kar Hum Aage Nikal Jayen
Aur Apni Manzil Ki Taraf Qadam Badhayen.
کسی ساءنس داں نے آج تک آسمان کی چھت 
دریافت نہیں  کی  ہے 
چاروں اور دشاءیں کھلی ہیں 
راستے بنے ہیں 
یا نٔی راہیں بناءی جا سکتی ہیں
انسان زمین کو اپنے قبضے میں کر کے ہی بڑا نہیں بنتا
زمین کو چھوڑ کر بھی بلندیاں حاصل کی جا سکتی ہیں  

پھر کیوں لوگ ذرا ذراسی بات پر بر سوں لڑتے جھگڑتے ہیں
ایک دوسرے کے خون کے پیاسے ہو جاتے ہیں
ہم نے یہاں ترقّی کرنے
اور آ گے بڑھنے کے امکانات پر غور نہیں کیا
کسی سے ٹکرا کر مر جانے سے بہتر ہے
اسے راستہ دے کر
ہم آ گے بڑھ جأیں اور اپنی منزل کی طرف
قدم بڑھأیں۔
۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،

اتوار, فروری 01, 2009

Khyal Pare ٹی وی چینل اور بچّوں پر منفی اثرات

بچّے اور ٹی وی چینل

.Bachchon mein badhti hooi  behoodgion ko ab taleem ka hissa samjha ja ta hai.Yeh hamare nizame taleem ka eik almiya hai 

Bhart mein T.V. Chenalon mein lafter Channel  aur Nach Balye Vaghaira ki maqbooliyat ke bad ab aksar Channels par bachchon ka dakhla shuru  ho gaya hai jhan chote chote bachche nachte hooe nazar aate hain vaheen ghatiya aur na munasib qism ky joke bhi sunate hain .bchchon ko in behoodgiyon mein ghasit te hooe logon ko ab sharm mahsoos naheen hoti kyon ki ab t.v. ne ise certify kr diya hai .Pahly bchche agar na munasib libas pahante ,filmi gane gate to teachers an ko  rokte tokte the .Yeh hamari talim ka eik hissa tha likin ab school kesocial gathering minn khuly taur par filmi ganon par students ke thirakny ka riwaj aam hai. Main ne khud dekha ki ab kuch teachers talba ko class mein bula kar sub talba ky samny doosre teacdher ki naqal kr ny ky kahty hain .bachchon mein badhti hooi in sabhi qism ki behoodgion ko ab taleem ka hissa samjha ja ta hai.Yeh hamare nizame taleem ka eik almiya hai