جمعہ, مارچ 26, 2010

Taleem e Niswan Womens Education تعلیمِ نسواں








تعلیمِ نسواں



,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,
یوں تو تعلیم و تربیت کی ضرورت ہر دور میں محسوس کی جاتی رہی ہے ۔ دورَ جدید کے تناظر میں دیکھا جائے تو اس کی ضرور ت اہمیت اور افادیت سے کوئی انکار نہیں کر سکتا ۔ آج دنیا جس برق رفتاری سے ترقّی کی منزلیں طے کر رہی ہے اس سے اہلِ علم بخوبی واقف ہیں ۔ نئے نئے علوم کے ساتھ ہی تحقیق و تدوین کا کام بھی اس قدر تیز رفتاری سے جاری ہے کہ دنیا انگشت بدنداں ہے ۔




  مسلمانوں پر علم کا حاصل کرنا فرض قرار دیا گیا ہے یہی وجہ ہے کہ طلوعِ اسلام کے بعد مسلمانوں نے مختلف میدانوں میں جو کار ہائے نمایاں انجام دئے  وہ تاریخ کے صفحات پر رقم ہیں ۔ اسلام نے دیگر شعبوں کی طرح حصولِ علم کے معاملہ میں مرد و زن کے مابین کوئی تفریق نہیں کی۔ نبی ِکریم ﷺ کاارشاد ہے۔: 

 طلب العلم فریضۃُ علی کلِ مسلم و مسلمۃ
علم کا حاصل کرنا ہر مسلمان (مرد اور عورت )پر فرض ہے۔

اس معاملہ میں دینی و دنیاوی علوم کی بھی تخصیص نہیں رکھی گئی ۔ مسلمان برائیوں سے محفوظ رہے اس لئے مسلمان کے لئے یہ بھی ضروری ہے کہ وہ برائیوں سے بھی آگاہ رہے ۔ 

 ماں کی گود کو انسان کی پہلی درسگاہ سے تعبیر کیا گیا ہے۔


 یہ حقیقت ہے کہ دنیا میں وارد ہوتے ہی اس کی تعلیم و تربیت کا سلسلہ ماں کی آغوش سے شروع ہو جاتا ہے اور تا دمِ آخر جاری رہتا ہے ۔ بچّے کی صحیح تعلیم و تربیت کا فریضہ ماں ہی بخوبی انجام دے سکتی ہے ۔ یہاں ہمیں ایک نکتہ یہ بھی ملتا ہے کہ استاد کے اندر بھی اگر ماں کی سی شفقت ، محبّت اورطالبِ علم کی خیر خواہی کا جذبہ موجود ہو توتعلیم کے تمام مراحل آسان اور پر اثر ہو جاتے ہیں ۔

 عام طور ہر کہا جاتا ہے کہ
ہر کامیاب شخص کے پیچھے کسی عورت کا ہاتھ ضرور ہوتا ہے ۔ 

 خواہ وہ سکندرِ اعظم کی ماں ہویا شیواجی کی جیجا ماتا ۔انگریزی زبان میں بھی اسی مفہوم کو ان الفاظ میں ادا کیا گیا ہے۔

 The hands that rock the craddle,rule the world
جو ہاتھ جھولا جھلاتے ہیں، حقیقتاًوہی ہاتھ اس دنیا پر راج کرتے ہیں۔

 تاریخ کے صفحات اس قول کی تصدیق کرتے ہیں۔ آج دنیا کے حالات پر نظر ڈالئے تو پتہ چلے گا کہ دنیا کیسے کیسے انقلابات سے دوچار ہے ۔ ان حالات میں خواتین کی ذمہ داریاں اور بھی بڑھ جاتی ہیں ۔
ان کے لئے گھریلو فرائض انجام دینے کے ساتھ ساتھ دنیا جہاں کے حالات سے با خبر رہنا بھی لازمی ہو گیا ہے ۔ 

یوں تو ہر مومن کے لئے لازمی ہے کہ وہ ہر خطرہ سے باخبر ہواور ایمان سمیت اپنی حفاظت خود کرے ۔ ایک حدیث کا مفہوم ہے کہ مومن ایک سوراخ سے دوبار نہیں ڈسا جاتا ۔
ایک انگریز کا قول ہے
:
An intelligent person is the one

 whose feet are planted in his
country and his eyes 
 should survey the whole world.
یہ وقت کا تقاضا ہے کہ عورتیں بھی تعلیم کے زیور سے آراستہ ہوں، اسلئے کہ تعلیم انسان کو بہترین زندگی گزارنے کا سلیقہ سکھاتی ہے ۔

 دنیا کی عظیم المرتبت شخصیات نے خواتین کے مرتبہ کو سمجھا اور ان کا احترام کیا۔ .
نبی کریم ﷺ کا ارشاد ہے کہ ماں کے قدموں تلے جنّت ہے ۔

 یہ سچ ہے کہ عورت کو دنیا میں مختلف کردار نبھانے ہوتے ہیں ۔ کبھی ماں بن کر تو کبھی بہن کی صورت میں ، کبھی بیوی کے روپ میں اور کبھی بیٹی بن کران تمام مدارج میں اس کے ذمّہ داریاں بھی بدلتی رہتی ہیں ۔ اسے نئے نئے حالات سے دوچار ہونا پڑتا ہے ۔ ان تمام مدارج سے کامیابی کے ساتھ گزرنے کے لئے عورت کا تعلیم یافتہ ہونا ضروری ہے ۔ اگر عورت علم اور انسانیت سے عاری ہو تو اس کی موجودگی اچھّے خاصے گھر کو جہنّم میں تبدیل کر سکتی ہے اور اس کا اعلیٰ کردار پورے خاندان کے لئے نعمت اور برکت ثابت ہو سکتا ہے اس معاملہ میں تعلیم موثر کردار ادا کرتی ہے ۔  


 ہمارے عہد میں جو سماجی مسائل اور بہروپ جنم لے رہے ہیں خواہ وہ کسی مذہب و ملّت سے تعلق رکھتے ہوں اس بات کا ثبوت ہے کہ لوگوں کی تعلیم و تربیت میں کہیں نہ کہیں کوئی خامی ضرور رہ گئی تھی انسان صحیح تعلیم کے بعد ہی انسان بنتا ہے ورنہ تعلیم اس کے لئے الزام بن کر رہ جاتی ہے ۔

82 تبصرے:

  1. ميرے تو اپنے خيالات مضمون جيسے ہی ہيں مگر ُميں نہ مانوں ` حضرات کا کيا کيا جائے جن کو ان پڑھ عورت ميں وہ وہ خوبياں نظر آ تی ہيں جو خود ان پڑھ کو بھی اپنے آپ ميں نظر نہيں آتيں

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. tumhen apne me koi khoobi nai dikhti shaid

      حذف کریں
    2. U a are not right unfortunately ap jase log bhi hai jo itni typical such rkhty ha kuch log ghurbat ka basis apni nation ko taleem ni dilwa sakty khubian har insan main ha chayy wo unpr ho ya Parha likha ho

      حذف کریں
  2. اچھی تحرير ہے
    "اَن پڑھ عورت ميں خُوبياں ہوتی ہيں" ۔ زندگی ميں پہلی بار ہی سُنا ہے گويا 70 سال ہم جھَک ہی مارتے رہے

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. PTA MI KON C KHUBEAN HOTE HEIN AP NAY JHK NI MARA THEEK KAHA AP NAY

      حذف کریں
    2. khobion ka koi bhi taluq prhnay say ni hy....han ap aesa kha sktay hen ka prha likha hona apnay ap me ek khobi zaror hy....magr aesa hr kz ni k jo log kbhi school ye colge ni gaey wo jahl hen...ye un me koi khobi ni....han agr wo kisi ko taleem hasil kray say roktay hen to zaror apnay ap ko aaib dar bnatay hen or jahalt ka sabo daytay hen.....alfaz ka chunao b ap ki zhni kafiyat ko zahr krta hy.

      حذف کریں
  3. چليں جي انکل مان ہی گئے کہ ستر سال جھک ماری ہے ابھی بھی ايک عمر پڑی ہے انکل سدھرنے کے ليے

    جواب دیںحذف کریں
  4. agr larka kary to theak hr kam or agr lakri kary to gonahgar...............wwata science ...........i prefer education for women.........

    جواب دیںحذف کریں
  5. aacccccccchaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaaa nai hai
    :p
    :o
    aiman n

    جواب دیںحذف کریں
  6. hahahahahahahahaaaaaaaaahahahahahahahahaha
    kisi ne besti kardi
    :O
    :p
    ooooooooo

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. pad maar ke phoosi soongo haahaahaahaahaahaa

      حذف کریں
    2. perhny k bad bhi jhalat qaim hai aese log qoam ko aagey barhny nhi dete

      حذف کریں
    3. poti kr k chamach (spoon) say khao wo ziada mazay ki hoti hai :D

      حذف کریں
    4. yaar ap ko sharam nhn ati , aap kitni gndi batein kr rhe hn!!!!!

      حذف کریں
  7. these are very imp words to understand .this essay can change the world.nepolean said ``give me good mothers i will give u a great youth

    جواب دیںحذف کریں
  8. apka s;a tu bahut acha ha par is waqt par talem niswa aam hai

    جواب دیںحذف کریں
  9. ye taleem e niswah ke baare mai hai ya kia :))

    جواب دیںحذف کریں
  10. thanks it helps me alot ..tommorow is my paper and i gonna prepare it
    syeda tuba

    جواب دیںحذف کریں
  11. mujhy in comments ko parh kr boht afsos hua k hamary nojawan kitny giri hue soch k malik hain wo bat krty huy ye nhe sochty k wo kis qadar ghair zima dari ka saboot dy rhy hain. khuda ra agar soch achi nhe rakhty to esy dosroon tk na ponchain.

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. u r right ....what stupidity they have created it is about knowledge to aware people not to humiliate i agree with u

      حذف کریں
    2. I AM ALSO WITH U!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!

      حذف کریں
  12. q k may ne jb ye paragraph khawateen ki education k hawaly se parha to boht achah lga. kash hamary mard hzrat ki soch msbat ho jay. ameen

    جواب دیںحذف کریں
  13. acha hy mgr urdu ka essay hy aqwal b urdu me hony chahiyen..........thanx

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. roori nahi.. english quotes ka apna hi impression hota ha

      حذف کریں
  14. یہ تبصرہ مصنف کی طرف سے ہٹا دیا گیا ہے۔

    جواب دیںحذف کریں
  15. in the hadith of education the arabic word " muslamat" is not included so please remove this word

    جواب دیںحذف کریں
  16. very nyc!!!!! 2morow is ma paper of urdu!!!! this is really gonna help!!!! :)

    جواب دیںحذف کریں
  17. جوابات
    1. taleem hasil karna har musalman mard aur aurat par farz hai ye qaul mabi kareem sallallahualaihiwa-alihi-wassallim ka hai naa k farman-e-ilahi hai plzz correct this

      حذف کریں
  18. soooooooooooooooooooooooooo good Im student of matric and this essay helps me alot to makes my owen essay. thank you

    جواب دیںحذف کریں
  19. I m also a student of matric.....I need this essay for my Urdu subject....................THNX!

    جواب دیںحذف کریں
  20. acha hai magar jo muje chaheye wo es me nahi hai.

    جواب دیںحذف کریں
  21. gud but i wanted something more..... not enough at BA level...

    جواب دیںحذف کریں
  22. hussain ahmed sayan that it is the best essay but short

    جواب دیںحذف کریں
  23. my mother is educated as well as my sisters. also my wife is educated .having personal experience i came to the conclusion that education is bad for women (female)

    جواب دیںحذف کریں
  24. Mere paas guide ni thi to mein yahan se Essay dekh rha hun xD

    جواب دیںحذف کریں
  25. tommorrow will be our paper this is very helpfull i like this eassy................

    جواب دیںحذف کریں
  26. taleem hasil karna sub par farz ha.ourat or mard zindage k gari k 2 payyeh han. "LEKIN" ye zindage ki gari tab he sahe chale ge jab dono payyeh apne apne jaga par thek se kam karen ge. hmare mazhab ne har ik chez ko ful define kar k hame btaya ha. ourat ka kam kamana or nokri karna ni ha. agar ham sub apne apne hadod me reh kar kam karen to hmari life satisfy be ho ge or life me sakon be ho ga. ham ne ourat ko independentke name par ghar se nikal kar bazar be betha dia ha. or wo be khush han k 6000, 7000 ki job mil gae ha. ab os ourat ko apne family be sambhalni ha. office be jana ha. yene os par double burden dal dia gea ha. female education ka maqsad ha k agar ak maan (Mother) parhi likhe ho ge to wo ak pori nasal ki tarbiat ache tarhan kar sake ge, agar parh likh kar job karni ha to os se behtar unparh ourat he thek ha. kam az kam ghar beth kar oulad ki tarbiat to kare ge na.

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. oh kya bat krdi hai jnab ap ne...me also a woman...but i lyk ur spirit the most...but brother there is a condition...weather a women should their duties or not...specialy who are viddows n no one support for their chidren frpm their realitives...

      حذف کریں
  27. can u plzzz post other essays with points??

    جواب دیںحذف کریں
  28. great......i ussaully take points frm this site.....v good

    جواب دیںحذف کریں
  29. jis ilm ki taseer se zun hoti hai na zun
    kehtay hain ussi ilm ko arbab e nazr mout.......ilm hasil karo with in a limit of islam and never cross the limits of islam.

    جواب دیںحذف کریں
  30. it is the good writing.but some peoples make it bad as they are.

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. correct word is people not peoples ok make it correct

      حذف کریں
  31. AP sb ki nazar main taleem kya hai,? Shahoor kya hai,? Or ham kis taleem ko hasil kar rahe hain?

    جواب دیںحذف کریں
  32. this essay is very helpful 4 me thnx..!!

    جواب دیںحذف کریں
  33. A very nice essay!!! I prefer education for women

    جواب دیںحذف کریں
  34. Itna relevent nahi tha.... education is obligatory for women but not job.... admi nay aurat per ghar kay burden kay sath sath bahir ka bojh bhi daal diya aur wo khush ho rahi hai....education is liye zaroori hai kay wo apni nasal ki achi up bringin kar sake na kay unhen maid kay hawalay kar kay khud bahir sar khapati phire.

    I am a girl of tenth class but I can better essay than it....

    جواب دیںحذف کریں
  35. Youth Talent is a social platform for professionals where they can show their talent by managing photo albums, video albums, blog posting and post jobs to seek talent. People can make friends, chat with them and share anything they have in this talent portal to friends or public.socialmedia

    جواب دیںحذف کریں