منگل, اگست 12, 2008

jagannath azad's poem on independence

آ زادی کے بعد
( جگن ناتھ آ زاد )

۔۔۔۔۔
گردِ دامن سے غلامی کو چھڑانے والے
تیرے ماتھے پہ غلامی کا نشاں آ ج بھی ہے
جو سماں تیری نگاہوں سے نہاں ہے شاید
وہ سماں میری نگاہوں پہ گراں آ ج بھی ہے
تو بہاروں کا فسوں دیکھ کےمسحور نہ ہو
ان بہاروں کے تعاقب میں خزاں آ ج بھی ہے
یہ الگ بات ہے تو اس کو نہ دیکھے لیکن
تیرے ماحول میں آ ہوں کا دھواں آج بھی ہے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


ہر موج کے لب پہ صبح و شامِ آ زادی
بہتے ہو ءے دریا کا خرام آ زادی
زنہار یہ اے بندۂ آ زاد نہ بھول
فطرت کا ہے اوّلین پیام آ زادی
.....نہال سیوہاروی.



کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں