منگل, اگست 12, 2008

Ashar on Patriotism

۔۔۔     آزادی اور قید و بند      ۔۔۔
غزل میں ( اشعار )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ملے خشک روٹی جو آزاد رہ کر
ہے وہ خوف و ذلّت کے حلوے سے بہتر         ( اسمٰعیل میرٹھی )
طلب فضول ہے کانٹوں کی پھول کے بدلے
بہشت بھی نہ لیں ہم ہوم رول کے بدلے            ( چکبست )
رودادِِِِِ فصلِ گل نہ اسیرِ قفس سے پوچھ
کب آ ءی کب بہار گءی کچھ خبر نہیں          ( عبدالمجید سالک )
یہ قید و صید کی اندیشہ ہا ٔے بیجا کیا
چمن کی فکر کرو ،آشیاں کی بات کرو           (عبدالمجید سالک )

قید میں اتنا زمانہ ہوگیا
اب قفس بھی آ شیانہ ہو گیا                           (حفیظ جونپوری )
کیسا چمن کہ ہم سے اسیروں کو منع ہے
چاکِ قفس سے باغ کی دیوار دیکھنا              ( میر تقی میر )
کیا بتا ٔوں کس قدر زنجیرِ پا ثابت ہؤے
چند تنکے جن کو اپنا آ شیاں سمجھا تھا میں    (جگر مراد آ بادی )
ہوں گرفتارِ الفتِ صیّاد
ورنہ باقی ہے طاقتِ پر واز                         (غالب )

صبا نے پھر درِ زندان پہ آ کے دی دستک
سحر قریب ہے ، دل سے کہو نہ گھبراءے        ( فیض )
یہ داغ داغ اجالا یہ شب گزیدہ سحر
کہ انتظار تھا جس کا یہ وہ سحر تو نہیں         ( فیض )
زنجیر کی لمباءی تک آ زاد ہے قیدی
جنگل میں پھرے یا کو ءی گھر بار بسالے       ..ندا فاضلی  

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں