بدھ, مارچ 17, 2010


 جدید شاعر، شریف احمد شریف نہیں رہے ۔۔
  
ناگپور 
۱۷!مارچ 
شہر ناگپور کے معروف شاعر شریف احمد شریف آج ایک طویل علالت کے بعد خالقِ حقیقی سے جا ملے ۔انّا للہ و انّا الیہ راجعون ۔

شریف احمد شریف نہ صرف جدید شعرا ء میں ایک معتبر مقام کے حامل تھے بلکہ گذشتہ چند برسوں کے دوران انھوں نے بچّوں کے لئے کہانیاں اور نظمیں لکھ کر ادبِ اطفال میں بھی اپنی شناخت قائم کر لی تھی ۔ منفرد لب و لہجہ ، جدید حسّیت اور دل کو چھو لینے والے انداز میں زندگی کے حقائق کا انکشاف ان کی شاعری کی اہم خصوصیات ہیں۔
ان کا شعری مجموعہ ’کارِ جہاں بینی ‘ ادبی حلقوں میں دادِ تحسین حاصل کر چکا تھا ۔ انھوں نے عالم اسلام اور معاشرتی مسائل پر چند ایسی منظومات بھی تخلیق کی تھیں جن میں بڑی بے باکی کے ساتھ سماجی حقائق کو بے نقاب کیا تھا۔
بہت زیادہ تعلیم یافتہ نہ ہو تے ہوئے بھی ادب پر ان کی گہری نظر تھی۔ ان کی تنقیدی بصیرت ان مضامین اور مختلف کتابوں پرتحریر کئے گئے تبصروں سے بھی آشکار ہے جنھیںادبی حلقوں میں قدر کی نگاہ سے دیکھا گیا ۔ 

اللہ ربّ العزّت انھیں اپنے جورِ رحمت میں جگہ عطا فرمائے اور پسماندگان کو صبر کی تفیق دے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل 
شریف احمد شریف 
ناگپور
ککککککککککککککککککککککککککککککک
شکایتیں ہیں ہمیں اپنی چشمِ تر سے بھی 
کبھی یہ ابرِ گریزاں تو کھل کے بر سے بھی
بہت حسین ہے شامِ وصال کا منظر 
پرندے لوٹ کے آنے لگے سفرسے بھی
یہی نہیں کہ تری انجمن میں جی نہ لگا
عجیب دل ہے کہ وحشت زدہ ہے گھر سے بھی 
ہمارے دل پہ نزولِ وحی تو ہو تا ہے 
وہ شعلہ بن کے پکارے کبھی شجر سے بھی 
رہا نہ لفظ سے رشتہ کو ٔی معانی کا
وہ بدّعا کہ دعا ہو،گٔی اثر سےے بھی
یہی وہ گھر ہے کہ جس میں شریف رہتا تھا
عیاں شکوہِ فقیری ہے بام ودر سے بھی
،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،، 
ایک نظم بچّوں کے لٔے 
ییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییییی
ایک بتاشہ دودھ سا اجلا ، اک چاندی کا پیسہ چاند 
وہ دیکھو آکاش پہ نکلا ، گول سی روٹی جیسا چاند


چاند میں بیٹھی بڑھیا نانی کات رہی ہے سوت اپنا 
جانے کتنی صدیوں سے وہ دیکھ رہی ہے کیا سپنا 


اس کی کٹیا سے کچھ آگے ایک محل ہے سونے کا 
اس میں اک تالاب ہے جس میں زرد کنول ہے سونے کا 

کہتے ہیں تالاب میں ہر دم شہد کی نہریں بہتی ہیں 
یہ بھی سنا ہے اسی محل میں سندر پریاں رہتی ہیں 


اڑتے اڑتے راتوں میں وہ دنیا میں آجاتی ہیں 
جھولے میں سوتے بچّوں کو میٹھے خواب دکھاتی ہیں 

نٹ کھٹ سی جب کوئی پری بچّے کو بوسہ دیتی ہے 
تب ننھے کے ہونٹوں پر مسکان سی لہریں لیتی ہے 

چاند کی اس دنیا کے بچّو! راز تو سارے جانے کون 
آموں اور امرود کے اس میں باغ بھی ہیں پر مانے کون



2 تبصرے:

  1. انا للہ انا الیہ راجعون
    خدا انہیں غریق رحمت کرے۔ ادب اطفال ایک مشکل صنف ہے اور بہت کم لوگ اس میں ہاتھ ڈالنے کی ہمت کرتے ہیں

    جواب دیںحذف کریں
  2. انا للہ انا الیہ راجعون
    خدا انہیں غریق رحمت کرے

    جواب دیںحذف کریں