Sunday, February 15, 2009

Sitaron Se Aage Jahan Aur Bhi Hain


Khyal  Pare
خیال  پارے 
Point Of view

Sitaron Se Aage Jahan Aur Bhi Hain
ستاروں سے آ گے جہاں اور بھی ہیں 
,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,,

Kisi Sainsdan Ne Aaj Tak
Aasman Ki Chat Daryaft Naheen Ki Hai .
Charon Or Dishaiyen Khuli Hui Hain ,
Raste Bane hain 
Ya Naiee Raheen Banayi Ja Sakti Hain 
Insan Zameen ko Apny Qabze men Kar Ke hi Bada naheen Banta
Zmeen ko taj kar ,Chod kar Bhi bulandiyan Hasil ki Ja Sakti Hain
……………,

Phir Kyon Log Zra Zra Si Bat Par Brson Ladte Jhagadte Hain ‘
Ek Doosre Ke Khoon Ke Pyase Hain,
Hum Ne Yahan taraqqqi karne ,Aage badhne ke Imkanat aur Chances
Par Ghaur Naheen Kiya .

Kisi se Takra Kar mar Jane Se Behtar Hai 
Use Side de kar Hum Aage Nikal Jayen
Aur Apni Manzil Ki Taraf Qadam Badhayen.
کسی ساءنس داں نے آج تک آسمان کی چھت 
دریافت نہیں  کی  ہے 
چاروں اور دشاءیں کھلی ہیں 
راستے بنے ہیں 
یا نٔی راہیں بناءی جا سکتی ہیں
انسان زمین کو اپنے قبضے میں کر کے ہی بڑا نہیں بنتا
زمین کو چھوڑ کر بھی بلندیاں حاصل کی جا سکتی ہیں  

پھر کیوں لوگ ذرا ذراسی بات پر بر سوں لڑتے جھگڑتے ہیں
ایک دوسرے کے خون کے پیاسے ہو جاتے ہیں
ہم نے یہاں ترقّی کرنے
اور آ گے بڑھنے کے امکانات پر غور نہیں کیا
کسی سے ٹکرا کر مر جانے سے بہتر ہے
اسے راستہ دے کر
ہم آ گے بڑھ جأیں اور اپنی منزل کی طرف
قدم بڑھأیں۔
۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،۔،

3 comments: