جمعرات, جنوری 01, 2009

غزل۔۔ یہ اندھیرے کہاں سے آ ءے ہیں Ghazal ..Yeh Andhere Kahan Se Aaye Hain



غزل

ہم تو سورج نکال لائے تھے 
یہ اندھیرے کہاں سے آئے ہیں 

توڑ آ ئے تھے ہم سبھی بندھن 
پھر یہ گھیرے کہاں سے آ ئے ہیں 

سر پہ الزام کی جگہ ان کے 
پر سنہرے کہاں سے آئے ہیں 

کھو گئے ہیں کہاں سبھی اپنے 
تیرے میرے کہاں سے آئے ہیں 

کون بکھرا گیا ہنسی اپنی 
یہ سویرے کہاں سے آئے ہیں 

سوچ کا ہے ہجوم ذہنوں پر 
اتنے ڈیرے کہاں سے آ ئے ہیں

Ghazal

Hum To Suraj Nikal Lae The 
Yeh Andhere Kahan Se Aaye Hain

Tod Aaye The Hum Sabhi Bandahan 
Phir Yeh Ghere Kahan Se Aaye Hain

Sar pe Ilzam Ki Jagah Un Ke 
Par Sunahare Kahan Se Aaye Hain

Kho Gaye Hain Kahan Sabhi Apne
Tere Mere Kahan Se Aaye Hain

Kaon Bikhra Gaya Hansi Apni
Yeh Savere Kahan Se Aaye Hain

Soch Ka Hai Hujum Zehnon par 
Itne Dere Kahan Se Aaye Hain



2 تبصرے:

  1. یہ غزل بہت اچھی لگی جناب
    انتخاب ہے یا آپکا اپنا خون جگر؟

    جواب دیںحذف کریں
  2. محترمی ۔شکریہ یہ میری ہی تخلیق ہے ۔اس بلاگ پر تقریباً سبھی تخلیقات طبع زاد ہی۔ں
    محمّد اسد اللہ

    جواب دیںحذف کریں