منگل, جولائی 22, 2008

Ghazal



غزل

نہیں شریک عذابوں کا جانِ جاں کو ئی

خدا گواہ،نہیں ہے نہیں ، یہاں کو ئی


یہ پھیلتی ہو ئی باہیں ہیں اپنی منزل کی

ہمیں گماں ہے کہ ہے راہ درمیاں کوئی


عنایتیں ہیں تری دھوپ سرد مو سم کی

بڑھے جو حد سے تو بیٹھے بھلا کہاں کو ئی


رہا وہ گوش بر آ واز، اور ہمیں بر سوں

خیال تک نہیں آ یا کہ ہے یہاں کو ئی


سوائے حلقۂ یاراں میں اپنی شہرت کے

ہماری ذات کا دشمن یہاں کہاں کو ئی


ہر ایک سمت خموشی کا کفر چھایا ہے

ہماری ذات کے صحرا میں دے اذاں کو ئی


کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں