Friday, June 27, 2008

غزل



سچ ہے کہ رگِ جاں سے لگے بیٹھے ہو لیکن

کیوں اس شہرِ جاں کی سیاحت نہیں کر تے



ہے شہر کے لو گوں سے اسے ایک شکایت

تعظیم تو کر تے ہیں محبّت نہیں کرتے



میں نے بھی مکھوٹوں کو ہلا ڈالا ہے جڑ سے

اب لو گ یہاں مجھ کو ملامت نہیں کرتے



مدّت ہو ئی خوشیاں یہ پتہ بھول گئی ہیں

اس گھر کی طرف آ پ بھی زحمت نہیں کرتے



الفاظ کی حرمت کا ہمیں پاس بہت ہے

ہم اپنے مقدّر کی شکایت نہیں کر تے



No comments:

Post a Comment