منگل, جولائی 21, 2009

Nat-Ek Intekhab عبد العزیز خالد


 ۔۔۔۔۔۔۔۔   نعت   ۔۔۔۔
عبد العزیز خالد
مُطاعِ آدم و انجم ،متاعِ لوح و قلم 
محمّد ؑ اُمّیِ محبوبِ کبریا صَلعم 

محمّدؑانجمنِ کن فکاں کا صدر نشیں
محمّدؑ افسرِ آ فاق و سَرورِ عالَم 

وہ عبدہُ و رسولُہُ و اِسمہُ احمد 
کتاب و حکم و نبوت کا خاتم و خاتَم 

حمُود وحا مد و احمد ،محمّد و محمُود
کریم و میر ،کرام و مکرّم واکرم

وہ لا یمُو ت ،سراجِ سُبل ،امامِِرُسل 
امیرِ قافلۂ سخت کوشِ اہلِ ہمَم

بہارِ گلشنِ ایجاد وحسن ِ ہفت رواق 
گُلِ سرسبدِدُودۂ بنی آدم 

اُسی کو صاحبِ خلقِ عظیم کہتے ہیں 
وہی ہے نوعِ بشر کامعلّمِ اعظم 

شمار کرنے چلیں اس کی خوبیوں کا اگر 
تو ساتھ چھوڑ دیں تھک تھک کے نیل پنکھپدم 

ہے جس کی ذات مطہّرخمیرِ مایۂ کون 
ہیں جس پہ آ ئینہ اسرارِمخفی و مبہم 

رموزِ کن فیکوں جس پہ مُو بمُو روشن 
وہی جو ختمِ رسُل ہے وہی جو فخرِ اُمم 

وہ عقلِ اوّل و اعلیٰ ،حقیقتِ اسماء
وہ نفسِ کائنۂ روحِ خالدِ و اعظم 

عطائے حقو جو قاسِم ہے وہ ابوالقاسِم 
ملیکِ مقسط و معطیِ ومقتدِر کی قَسم 

خلاصۂ دو جہاں جس کی ذاتِ والاشان 
گیا جو عرش پہ بے نردبان و بے سُلّم 

ہے جس کی شان فاوحیٰ اِلیہِ ما اوحیٰ 
وہ آسمانِ خِیم، انجم خدم سپہرحَشم 

جو مکّی و مدنی ہر وطن کا ہے وطنی 
حکیم و حاملِ احکام و حاکم و احکم 

اٹھائے ہاتھ دعا کو اسی کی خاطر جب 
رکھی خلیلِبراہیم نے بِنائے حرم 

خدا ئے قادرو قدّوس کے تصوّر سے 
کرے دلِ متزلزل کو ثابت و مُحکم 

انا بشر کا جو اعلان و اعتراف کرے 
نہیں جو وحیِ خدا میں مجازِ بیشی و کم 

محمّدعربی آ بروئے ہر دُدوسرا 
حبیبِ پاک خدا ،جانِ عالم و آ دم 

صفاتِ بو قلموںلا تُعدُّ لا تُحصیٰ
ثنائے خواجہ سے معذور ہیں زبان و قلم


3 تبصرے: